ایک نا ختم ہونے والا نقصان 43

ایک نا ختم ہونے والا نقصان

تحریر شئیر کریں

پہاڑوں اور جنگلات کی کٹائی: ایک نا ختم ہونے والا نقصان

کالم نگار :روبینہ شاہین

پاکستان میں آئے دن کسی جنگل میں آگ لگ جاتی ہے۔ اسلام آباد میں کل اور اس سے پہلے بھی ایسا ہوچکا ہے۔ اگر یہ سازشی عناصر کا کام ہے تو کھوج لگانے کی ضرورت ہے، لیکن اگر ہم خود اس کے ذمہ دار ہیں تو ہمیں اپنی ذمہ داریوں کا احساس ہونا چاہیے۔

اسلام آباد میں پہاڑوں کو کاٹ کر ہاؤسنگ سوسائٹیز بنانے کا عمل نہ صرف قدرتی توازن کو بگاڑ رہا ہے بلکہ ماحولیات پر بھی منفی اثرات مرتب کر رہا ہے۔ پہاڑوں کی کٹائی سے مندرجہ ذیل نقصانات ہو سکتے ہیں:

پہاڑ زمین کو استحکام فراہم کرتے ہیں۔ ان کی کٹائی سے زمینی توازن بگڑ سکتا ہے، جس سے زلزلوں اور لینڈ سلائیڈنگ کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ قرآن مجید میں اللہ تعالی نے فرمایا ہے:

“وَالْجِبَالَ أَوْتَادًا” (النبا:7)

ترجمہ: “اور پہاڑوں کو (زمین کے لئے) میخیں (کیلیں) بنایا۔”

پہاڑوں کا مقصد زمین کو مستحکم اور متوازن رکھنا ہے، تاکہ وہ اپنی جگہ سے نہ ہل سکے۔ یہ قدرت کی حکمت ہے کہ پہاڑ زمین کے استحکام کا ذریعہ ہیں۔پہاڑوں کی کٹائی سے جنگلات بھی ختم ہو جاتے ہیں، جو کہ ماحولیات کے لئے نقصان دہ ہے۔ درخت کاربن ڈائی آکسائیڈ کو جذب کرتے ہیں اور آکسیجن فراہم کرتے ہیں، جو کہ زندگی کے لئے ضروری ہے۔ جنگلات کا خاتمہ آب و ہوا کو بگاڑنے کا باعث بنتا ہے اور گرین ہاؤس گیسز میں اضافے کا سبب بنتا ہے۔

جنگلات میں کئی اقسام کے حیوانات پائے جاتے ہیں۔ پہاڑوں کی کٹائی سے ان کے رہنے کے مقامات ختم ہو جاتے ہیں، جس سے ان کی نسلیں خطرے میں پڑ سکتی ہیں۔ بہت سے جانور جنگلات میں ہی اپنی بقا کے لئے وسائل پاتے ہیں، اور ان کی معدومی سے بائیو ڈائیورسٹی کو شدید نقصان پہنچتا ہے۔

پہاڑوں اور جنگلات میں موجود جڑی بوٹیاں اور درخت پانی کو جذب کرتے ہیں اور زیر زمین پانی کے ذخائر کو بھرنے میں مدد کرتے ہیں۔ ان کی کٹائی سے پانی کی کمی کا سامنا ہو سکتا ہے۔ پانی کے ذخائر کا خاتمہ نہ صرف انسانی زندگی کے لئے بلکہ زرعی سرگرمیوں کے لئے بھی نقصان دہ ہے۔

جنگلات زمین کے پھیپھڑے کہلاتے ہیں۔ ان کے بے شمار فوائد ہیں:

– **آب و ہوا کی بہتری**: جنگلات کاربن ڈائی آکسائیڈ کو جذب کرتے ہیں اور آکسیجن فراہم کرتے ہیں، جو کہ آب و ہوا کو بہتر بناتے ہیں۔
– **بائیو ڈائیورسٹی**: جنگلات میں مختلف اقسام کے پودے اور حیوانات پائے جاتے ہیں، جو بائیو ڈائیورسٹی کو بڑھاتے ہیں۔
– **زمین کی حفاظت**: جنگلات زمین کو کٹاؤ سے بچاتے ہیں اور مٹی کی زرخیزی کو بڑھاتے ہیں۔
– **پانی کے ذخائر**: جنگلات بارش کو جذب کرتے ہیں اور زیر زمین پانی کے ذخائر کو بھرنے میں مدد کرتے ہیں۔

اسلام آباد میں پہاڑوں کو کاٹ کر ہاؤسنگ سوسائٹیز بنانے کا عمل نہایت ہی نقصان دہ ہے۔ ہمیں قدرت کے اس انمول تحفے کی حفاظت کرنی چاہیے۔ پہاڑ اور جنگلات نہ صرف زمین کو استحکام فراہم کرتے ہیں بلکہ ہمارے ماحول کو بھی بہتر بناتے ہیں۔ ہمیں اس حقیقت کو سمجھنا ہوگا اور اپنے قدرتی وسائل کی حفاظت کے لئے عملی اقدامات کرنے ہوں گے۔

پہاڑوں اور جنگلات کی حفاظت میں ہمارا کردار نہایت اہم ہے۔ ہمیں اپنے ارد گرد کے ماحول کی قدر کرنی چاہیے اور قدرت کی اس خوبصورتی کو برقرار رکھنے کے لئے اپنی ذمہ داریاں نبھانی چاہیے۔ اگر ہم نے آج اقدامات نہ کئے تو آنے والی نسلوں کو ایک ویران اور غیر محفوظ دنیا کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں