465

چھوٹی سی دعا اور تین بڑے انعام

تحریر شئیر کریں

چھوٹی سی دعا اور تین بڑے انعام پائیں۔وہ دعا کونسی ہے جانیے اس آرٹیکل میں

نبی کریم ﷺ کی مسنون دعائیں وہ انمول خزانے ہیں جس کے فائدے ہی فائدے ہیں دنیا میں بھی آور آخرت میں بھی۔۔۔۔مسنون دعائیں اور اذکار وہ انمول تحفے ہیں جو نبی رحمت کی طرف سے اس امت کو عنایت کیے گۓ ہیں۔ان کو حرز جان بنا کر دنیا و آخرت میں بے شمار فوائد حاصل کیے جا سکتے ہیں۔
مسنون دعائیں اور اذکار کے سلسلے میں آج کی یہ دعا ایک ایسی دعا ہے جو بہت چھوٹی سی ہے مگر جب بھی گھر سے باہر نکلیں اس کو۔پڑھنے کی عادت ڈالیں۔
گھر سے باہر نکلنے کی دعا
بسم اللہ توکلت الی اللہ ولا حول ولا قوتہ الا با للہ
ترجمہ؛میں نے (گھر سے نکلنے سے پہلے)اللہ کی طرف توکل کیا۔نہیں ہے کوئی طاقت اللہ کی طاقت کے سوا”
مسنون دعائیں اور اذکار میں سے ۔نبی کریم ﷺ نے فرمایا جو بندہ گھر سے نکلنے سے پہلے یہ دعا پڑھتا ہے اللہ اسے تین بڑے انعام عطا فرماتا ہے۔
ھدیت۔۔۔۔۔ہدایت دیا گیا
کفییت ۔۔۔۔اللہ تجھے کافی ہے
وفیت۔۔۔۔پورا کیا گیا
ھدیت مطلب اللہ کی طرف سے رہمنائی دیے جانا۔جب اللہ رہنمائی کرتا ہے تو ہر کام پایہ تکمیل تک پہنچتا ہے۔کبھی ادھورا نہیں رہتا۔اس دعا کو گھر سے نکلنے سے پہلے پڑھیں جس کام کے لیے نکلیں ہیں اس میں اللہ کی مرضی شامل حال رہے گی۔

یہ بھی پڑھیے

’دعائیں کرنے والوں کی خیر‘، کینسر آپریشن کیلئے جاتے ہوئے نادیہ جمیل کی دعا

کفیت “اللہ تجھے کافی ہے”اے میرے بندے پریشان مت ہو،تو اللہ کا نام لے کر اس کی ذات پر توکل کر کے نکلا ہے۔اس لیے اب اللہ کے ذمے ہے کہ وہ تیرے سارے بگڑے کام سنوار دے۔یہ کلمات پڑھنے سے اللہ بندے کے سارے کام اپنے ذمے لے لیتا ہے۔اس کا حاجت روا بن جاتا ہے۔
وقیت “تو بچا لیا گیا ہے”جب کوئی اللہ کا بندہ یہ دعا پڑھ کر نکلتا ہے تو اللہ اس سے وعدہ کرتا ہے تیسرے بڑے انعام کا۔کہ تو بچا لیا گیا ہے۔کس سے بچا لیا گیا؟ شیطان کے شر سے دشمنوں کی دشمنی سے اور حاسدوں کے حسد سے۔یہ انعام اللہ کے اس بندے پر ہوتا ہے جو مذکورہ بالا دعا پڑھ کر نکلتا ہے۔
ایک بات یاد رکھیں غافل دلوں کی دعا اللہ قبول نہیں کرتا۔جب بھی دعا مانگیں۔عجزو انکساری سے مانگیں۔خود پہ کیفیت طاری کریں۔ظاہر کریں اللہ کے سامنے کہ ہم محتاج ہیں اور تو غنی۔۔۔۔ہم ضرورت مند ہیں اور تو عطاکرنے والا۔پھر اللہ کے نبی ﷺ پر درود بھیجیں۔بے شک مختصر درود ہی سہی۔سب سے مختصر دورد: الھم صل علی” محمد کہہ دینا بھی ہے۔پڑھ سکیں تو ضرور پڑھیں ۔پھر دعا کے کلمات کہیں۔شعوری طور پر۔۔بے خیا لی میں نہیں کہ دماغ کہیں اور دل کہیں اور۔۔۔دل دماغ کی ساری حسیات کی بیداری کے ساتھ دعا مانگیں۔کلمات کی درست ادائیگی کو یقینی بنائیں۔پھر آخر میں سورہ توبہ کی آخری آیات پڑھیں۔روایت ہے کہ جو شخص عبادت کے بعد یہ کلمات کہتا ہے اللہ اسے ضرور قبول فرماتا ہے۔َپھر درود پڑھیں۔پانچ منٹ کی یہ بیداری آپ کے سب کام سنور جانے کی ضامن ہے۔تو پھر کیوں نا نبی کریم ﷺ کی پیاری دعائیں اور اذکار کو اپنی روزمرہ روٹین میں شامل کریں۔اور دنیا و آخرت میں نجات پائیں۔
اللہ ہمیں مسنون دعائیں اور اذکار پڑھنے کی توفیق دے۔آمین

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں