256

رائٹنگ سکل پالش کیسے کریں؟

تحریر شئیر کریں

رائٹنگ سکل پالش کیسے کریں؟

لکھنا ایک آرٹ ہے اسے محنت اور لگن سے نکھارا جا سکتا ہے۔لکھنے کی صلاحیت قدرتی طور پر بھی ودیعت ہوتی ہے جیسا کہ سٹوری رائٹنگ وغیرہ اور اسے خود سے بھی سیکھا جا سکتا ہے جیسا کہ میں آرٹیکل رائٹنگ پہ ایک بلاگ لکھ رہی ہوں،لکھنے سے پہلے اس میں ریسرچ کرنا سوچنا اورپھر لکھنا آتا ہے۔

کامیابی کے ساتھ ساتھ ہمیں کچھ سکلز لازما بھی سیکھنا چاہئے۔ چاہے آپ کی کوئی بھی فیلڈ ہو۔ سائیکولوجی ہو، سائنس ہو یا لیٹیچر ہو اس میں تو کامیاب ہوں مگر آپ کو بہت آگے جانا ہے اور ترقی کرنی ہے نام بنانا ہے تو کچھ ایسا کرنا ہوگا جو آپ کے فن کو جلا بخشے اس میں نکھار پیدا کرے جیسا ک آپ نے اردو ادب یا انگلش لٹریچر میں۔

ماسٹرز کر لیا اب آپ رائٹر بننا چاہتے ہیں اس کے لیے صرف ماسڑرز کرنا کافی نہیں۔۔۔آپ کو نئے پرانے رائٹرز کو پڑھنا ہوگا,اپنے رائٹنگ سٹائل میں وہ تمام خصوصیات پیدا کرنا ہوں گی جو کہ ایک اچھے رائٹر میں ہوں گی۔

تخلیقی سوچ

لکھنے کے لیے سب سے پہلی چیز سوچ ہے اگر آپ کو اچھے سے سوچنا آتا ہے تو آپ بہت اچھے رائٹر بن سکتے ہیں۔ سوچنا دنیا کے سب سے بڑے سکلز میں سے ایک ہے چاہے آپکسی بھی فیلڈ سے تعلق رکھتے ہوں سوچنا بہت ضروری ہے۔ ایڈرڈورڈ ڈی بونو دنیا کا مشہور پبلک سپیکر ہے اس کا سس سے بڑا کام سوچ کے اوپر ہے یہ لوگوں کو سوچنا سیکھاتا ہے کہ ہم نیااور منفرد کیسے سوچ سکتے ہیں۔

روزانہ لکھنے کی مشق

لکھنے والوں پہ لازم ہے کہ وہ روزانہ مقررہ وقت پہ لکھیں چاہے تھوڑا ہی کیوں نا ہو۔
اور جن میں لکھنے کی صلاحیت نہیں پائی جاتی وہ بھی روز کے لکھنے سے اپنی لکھنے کی سکل کو پالش کر سکتے ہیں۔

آپ آج سے اپنے رائٹنگ سکلز کو پالش کرنا شروع کردیں روز ڈیڑھ دو صفحہ کچھ بھی لکھنا شروع کردیں ۔ اس سے کیا ہوگا آہستہ آہستہ آپ میں لکھنے کی صلاحیت نکھرتی جائے گی۔ کوئی بھی مضمون لیں اسے صفحے کے درمیان لکھ دیں پھر اس سے جڑے الفاظ لکھتے جائیں۔ اور کبھی بھی نوٹس نہ بنائیں بلکہ تمام الفاظ آپ کے اپنے ہوں۔

رائٹنگ سکل کو پالش کرنے کا طریقہ:

بانو قدسیہ سے کسی نے پوچھا آپ رائٹنگ سکلز کو پالش کرنے کے لئے کیا ٹپ دیں گی انہوں نے کہا میری رائٹنگ سکلز کو پالش کرنے میں اشفاق صاحب کا بہت ہاتھ ہے۔ انہوں نے مثال دی کہ آپ روٹی کے ٹکرے لے کر دیا کے کنارے بیٹھ جائیں ۔ پہلے دن آپ بیٹھیں رہیں گے کوئی نہیں آئے گا آپ بیٹھے رہیں پھر دوسرے دن جائیں تو مچھلیاں نظر آئیں گی۔ اسی طرح آپ روز جاتے جائیں عادی بنا لیں تو مچھلیاں خود انتظار کرتی نظر آئیں گی۔

یہی مثال لکھنے کی ہے پہلے دن الفاظ آپ کے پاس مشکل سے آئیں گے مگر پھر آپ کی رائٹنگ سکلز اتنی پالش ہوجائے گی کہ آپ کا قلم خود بخود آپ کے الفاظ تحریر کرے گا۔ رائٹنگ سکلز کا مطلب رٹا لگا کر لکھنا نہیں ہوتا۔ کسی کی بیان کی ہوئی باتوں کو دہرا کر لکھنا نہیں ہوتا بلکہ اپنی سوچوں کو اپنے الفاظ میں لکھنا ہوتا ہے۔ آپ کی سوچوں کو ہی تخلیق کرنا ہی رائٹنگ سکلز کہلاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں