108

پرویز الہی اسمبلیاں بحال

تحریر شئیر کریں

پرویز الہی اسمبلیاں بحال

لاہور: لاہور ہائی کورٹ نے جمعہ کو گورنر بلیغ الرحمان کے ڈی نوٹیفکیشن آرڈر کو معطل کرتے ہوئے چوہدری پرویز الٰہی کو وزیر اعلیٰ پنجاب اور ان کی کابینہ کو صوبائی اسمبلی تحلیل نہ کرنے کی یقین دہانی پر بحال کر دیا۔

جسٹس عابد عزیز شیخ کی سربراہی میں لاہور ہائیکورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے متعلقہ حلقوں اور گورنر کے نقطہ نظر سے 11 جنوری 2023 تک جواب طلب کر لیا۔ بینچ نے اٹارنی جنرل پاکستان اور پنجاب کے ایڈووکیٹ کو بھی نوٹس جاری کر دیئے۔ جنرل، ان کی قانونی مدد کی تلاش میں۔ گورنر رحمٰن نے جمعہ کی

صبح وزیر اعلیٰ کو ڈی نوٹیفائی کرنے اور ان کی کابینہ کو تحلیل کرنے کا حکم جاری کیا جب الٰہی نے بدھ تک صوبائی اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ نہ لیا جیسا کہ پیر کو گورنر نے حکم دیا تھا۔ الٰہی نے گورنر کے حکم کو لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا۔ وزیراعلیٰ کے ڈی نوٹیفکیشن کیس کی سماعت کے دوران الٰہی نے عدالت کو تحریری یقین دہانی کرائی کہ اگر انہیں وزیراعلیٰ بنایا گیا تو وہ صوبائی اسمبلی کو تحلیل نہیں کریں گے۔

الٰہی کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے عدالت میں بیان حلفی پڑھ کر سنایا۔ “میں، چوہدری پرویز الٰہی، وزیر اعلیٰ پنجاب، عہد کرتا ہوں کہ اگر گورنر کا حکم معطل کیا جاتا ہے اور وزیر اعلیٰ اور کابینہ اپنی اصل پوزیشن پر بحال ہو جاتے ہیں، تو میں گورنر کو اگلی تاریخ سماعت تک اسمبلی تحلیل کرنے کا مشورہ نہیں دوں گا”۔

کہا. پڑھیں لاہور ہائیکورٹ نے مسلم لیگ ن کے معطل قانون سازوں کو پی اے اجلاس میں شرکت کی اجازت دے دی۔ عدالت نے حکم دیا کہ گورنر کے حکم پر عمل درآمد آئندہ سماعت تک ملتوی کیا جائے گا اور مزید کہا کہ یہ حکم درخواست گزار کو اپنی مرضی سے اعتماد کا ووٹ لینے سے نہیں روکے گا۔

حکم نامے کے بعد الٰہی اور ان کی کابینہ کو 11 جنوری یعنی اگلی سماعت تک بحال کر دیا گیا۔ قبل ازیں وزیراعلیٰ کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے عدالت سے استدعا کی کہ اس معاملے میں عجلت ہے کیونکہ نئے وزیراعلیٰ کے انتخاب تک گورنر کے حکم میں صرف وزیراعلیٰ کو کام جاری رکھنے کا کہا گیا تھا تاہم صوبائی کابینہ بھی ضروری ہے۔ حکومت کے روزمرہ کے امور کو چلانے کے لیے۔

جسٹس شیخ نے ریمارکس دیئے کہ بنچ دونوں فریقوں کے درمیان توازن چاہتا ہے، اس بات پر زور دیا کہ وہ نہیں چاہتا کہ کوئی اس کے حکم کو غلط مقصد کے لیے استعمال کرے۔ عدالت نے الٰہی کے وکیل پر واضح کیا کہ اگر درخواست گزار اسمبلی تحلیل نہ کرنے کا حلف لے کر آئے تو اسے عبوری ریلیف دیا جائے گا۔ وزیراعلیٰ کا حلف نامہ جمع کرواتے ہوئے بیرسٹر ظفر نے اسے عدالت میں پڑھ کر سنایا۔ جس پر مدعا علیہ کی جانب سے ایڈووکیٹ خالد اسحاق نے موقف اختیار کیا کہ اگر درخواست گزار سات دن میں اعتماد کا ووٹ لے تو گورنر اپنے احکامات واپس لینے کو تیار ہیں۔

وکیل اسحاق جو کہ پاور آف اٹارنی جمع کرائے بغیر گورنر کی نمائندگی کر رہے تھے، نے یہ بھی کہا کہ درخواست گزار کو یہ عہد کرنا چاہیے کہ وہ اس مدت میں اسمبلی تحلیل نہیں کریں گے۔ لاہور ہائی کورٹ نے گورنر سے کہا کہ وہ ایک حلف نامہ جمع کرائیں کہ وہ اپنا حکم واپس لے رہے ہیں۔ پانچ رکنی بینچ میں جسٹس عابد عزیز شیخ، جسٹس چوہدری محمد اقبال، جسٹس طارق سلیم شیخ، جسٹس عاصم حفیظ اور جسٹس مزمل اختر شبیر شامل تھے۔ اس سے قبل جسٹس فاروق حیدر بنچ میں شامل تھے تاہم انہوں نے درخواست کی سماعت سے خود کو الگ کر لیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں