121

مہنگائی ملکی تاریخی کی بلند ترین سطح پر پہنچ گی

تحریر شئیر کریں

اسلام آباد: پاکستان میں مہنگائی کی شرح ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔ وفاقی ادارہ شماریات (ایف بی ایس) نے ماہانہ مہنگائی کے اعدادوشمار جاری کردیے جس کے مطابق جنوری کے دوران ملک میں مہنگائی کی شرح میں 2.9 فیصد اضافہ ہوا اور ملک میں مہنگائی کی شرح 27.6 فیصد کی سطح پر پہنچ گئی۔

ایف بی ایس کے مطابق جولائی 2022 سے جنوری 2023 تک افراط زر کی مجموعی شرح 25.40 فیصد ریکارڈ کی گئی جبکہ جولائی 2021 سے جنوری 2022 تک افراط زر کی مجموعی شرح 10.26 فیصد تھی۔ ادارہ شماریات کے مطابق جنوری کے دوران شہری علاقوں میں مہنگائی کی شرح میں 2.4 فیصد اضافہ ہوا اور شہری علاقوں میں مہنگائی کی شرح 24.4 فیصد رہی

جب کہ دیہی علاقوں میں مہنگائی کی شرح جنوری کے دوران 3.6 فیصد بڑھی اور یہ شرح 32.3 فیصد اس سے قبل عالمی بینک نے کہا تھا کہ پاکستان کی معیشت شدید مسائل کا شکار ہے اور ملک میں مہنگائی 1970 کے بعد سے بلند ترین سطح پر ہے۔

عالمی بینک نے عالمی اقتصادی اثرات پر رپورٹ جاری کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ یوکرین روس جنگ سمیت کئی وجوہات کی وجہ سے عالمی معیشت کو سست روی کا سامنا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں مالی سال سیلاب کی وجہ سے پاکستان کی اقتصادی ترقی کی شرح 2 فیصد رہنے کا امکان ہے۔

اس سے قبل ورلڈ بینک نے پاکستان کی جی ڈی پی گروتھ 4 فیصد کی پیش گوئی کی تھی۔ ورلڈ بینک کے مطابق پاکستان کو مشکل معاشی حالات کا سامنا ہے۔ حالیہ بدترین سیلاب اور سیاسی غیر یقینی صورتحال پاکستان کے مشکل معاشی حالات کی بنیادی وجوہات ہیں،

پاکستان کو بیرونی قرضوں کی ادائیگی کے شدید خطرات کا سامنا ہے۔ دسمبر میں افراط زر کی شرح 24.5 فیصد تھی، جو 1970 کے بعد سب سے زیادہ ہے، عالمی بینک کا کہنا ہے کہ پاکستان میں سیلاب سے جی ڈی پی کا 4.8 فیصد لاگت آئی۔

مہنگائی ملکی تاریخی کی بلند ترین سطح پر پہنچ گی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں