146

اسرائیل کا مسجد اقصی پر حملہ

تحریر شئیر کریں

اسرائیل کا مسجد اقصی پر حملہ قابل مذمت ہے

کالم نگار:روبینہ شاہین

اسرائیلی فوجیوں کے مسجد اقصیٰ پر حالیہ حملے نے ایک بار پھر خطے میں جاری تنازعے کی طرف توجہ دلائی ہے۔ 5 اپریل 2023 کی رات کو ہونے والے اس حملے کی عالمی برادری کی طرف سے بھر پور مذمت کی جا رہی ہے اور اس نے خطے میں مذہبی مقامات کی حفاظت اور تحفظ کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا ہے۔

مسجد اقصیٰ اسلام کے اہم ترین مقامات میں سے ایک ہے اور یہ یروشلم کے پرانے شہر میں واقع ہے۔ اسے مکہ اور مدینہ کے بعد اسلام کا تیسرا مقدس ترین مقام سمجھا جاتا ہے اور یہ یہودیوں اور عیسائیوں کے نزدیک بھی ایک مقدس مقام ہے۔

، اور یہ کئی سالوں سے متعدد تنازعات کا شکار رہی ہے۔ مسجد اقصیٰ پر حالیہ حملہ اس وقت ہوا جب اسرائیلی فوجی یروشلم کے پرانے شہر میں داخل ہوئے اور اس مقام پر جمع ہونے والے فلسطینی نمازیوں سے جھڑپیں ہوئیں۔

اطلاعات کے مطابق اسرائیلی فوجیوں نے ہجوم کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس اور ربڑ کی گولیوں کا استعمال کیا اور جھڑپ میں متعدد افراد زخمی ہوئے۔ اس واقعے کی عالمی برادری کی طرف سے بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی ہے، بہت سے لوگوں نے علاقے میں تشدد کے فوری خاتمے اور مذہبی مقامات کے تحفظ کا مطالبہ بھی کیا ہے۔ مسجد اقصیٰ پر حملہ خطے میں تشدد اور تنازعات کی ایک طویل تاریخ کا تازہ ترین واقعہ ہے۔ اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازعہ کئی دہائیوں سے جاری ہے، اور اس میں جنگوں، دہشت گردی کی کارروائیوں اور سیاسی تنازعات کا سلسلہ جاری ہے۔

خطے کی صورت حال پیچیدہ اور گھبیر ہوتی جا رہی ہے، اور تنازعہ کی واحد وجہ یا حل کی نشاندہی کرنا مشکل ہے۔ صورتحال کی پیچیدگی کے باوجود یہ واضح ہے کہ مسجد اقصیٰ پر حالیہ حملہ بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی اور خطے میں مذہبی مقامات کی حفاظت اور سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔

اقوام متحدہ، یورپی یونین اور متعدد دیگر بین الاقوامی تنظیموں کی جانب سے اس حملے کی مذمت کی گئی ہے اور علاقے میں تشدد کے فوری خاتمے اور مذہبی مقامات کے تحفظ کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ مذہبی مقامات کی حفاظت اور سلامتی کے بارے میں فوری خدشات کے علاوہ، مسجد اقصیٰ پر حملہ ان وسیع تر مسائل کو بھی اجاگر کرتا ہے جو خطے میں تنازعات کو ہوا دے رہے ہیں۔ ان مسائل میں اسرائیل کی طرف سے فلسطینی علاقوں پر قبضہ، مغربی کنارے میں اسرائیلی آباد کاروں کی جاری آباد کاری اور اسرائیل اور فلسطین کے درمیان مذاکرات میں پیش رفت کا فقدان شامل ہیں۔
عالمی برادری کو ان مسائل سے نمٹنے اور تنازعات کے پرامن حل کے لیے کام کرنے میں اہم کردار ادا کرنا ہوگا۔ اس میں اسرائیل اور فلسطین کے درمیان مذاکرات کو دوبارہ شروع کرنے کی کوششوں کی حمایت کرنا، خطے میں انسانی حقوق اور قانون کی حکمرانی کو یقینی بنانا، اور فلسطین میں اقتصادی ترقی اور استحکام کو فروغ دینا شامل ہے۔

#Misqueaqsaattack2023

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں