46

چاند رات آرہی ہے

تحریر شئیر کریں

چاند رات آرہی ہے
از:قلم۔۔۔ نورین خان پشاور

چاند رات، جسے چاند کی رات بھی کہا جاتا ہے، اسلامی دنیا میں ایک انتہائی متوقع جشن ہے جو عید الفطر کے موقع پر ہوتا ہے۔چاند رات کا نام ہی کافی ہے خوشی کے احساس کے لئے،چاند رات تو واقعی چاند رات ہوتی ہے۔یہ رات رمضان کے مقدس مہینے کے اختتام کی نشاندہی کرتی ہے، مسلمانوں کے لیے روزے اور روحانی عکاسی کا مہینہ بالآخر ختم ہو جاتا ہے۔چاند رات کی رات خوشی اور جوش و خروش کا وقت ہے کیونکہ لوگ نئے چاند کے دیکھنے کا بے صبری سے انتظار کرتے ہیں، جو رمضان کے باضابطہ اختتام اور تین روزہ عید کے تہوار کے آغاز کا اشارہ دیتا ہے۔
جیسے جیسے مغرب کا وقت قریب آتا ہے لوگ چاند دیکھنے کے لئے چھتوں پر جانے لگتے ہیں۔سب صرف عید کا چاند ہی دیکھنے نہیں آتے بلکہ یہ بھی دیکھنے آتے ہیں کہ آیا کوئی چاند دیکھنے چھت پے آیا ہے یا نہیں۔ اس رات، مسلمان ممالک کی سڑکیں اور بازار ہجوم سے بھر جاتے ہیں کیونکہ لوگ آنے والے تہواروں کی تیاری کرتے ہیں۔خاندان اور دوست نئے کپڑوں اور تحائف کی خریداری کے لیے جمع ہوتے ہیں، اپنے گھروں کو روشنیوں اور رنگین بینرز سے سجاتے ہیں، اور روایتی مٹھائیوں اور پکوانوں کا ذخیرہ کرتے ہیں۔ ماحول متحرک ہوتا ہے ہواوں میں خوشیاں سفر کرتی ہےاور تہوار ہے، موسیقی اور قہقہوں سے ہوا بھر رہی ہے۔واہ کیا سماں ہوتا ہے۔
گھر کی ذمہ دار خواتین کو اپنے ملبوسات کی زیادہ فکر ہوتی ہے کہ عید کے دن انہیں سب سے زیادہ خوبصورت لگنا چائیے۔مگر اسکے ساتھ ساتھ خواتین کو یہ فکر بھی ہوتی ہے کہ عید پر آنے والے مہمانوں کی بھی اچھی خاطر مدارت ہونی چاہیے۔
خواتین اور لڑکیاں خاص طور پر اپنے ہاتھوں اور پیروں پر مہندی کے ڈیزائن کے ساتھ خود کو سجانے میں بہت احتیاط برتتی ہیں، یہ ایک روایتی عمل ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ خوش قسمتی اور برکت لاتے ہیں۔پرانے زمانے سے ہی عید پر خواتین مہندی اور رنگ برنگی چوڑیاں پہلے سے ہی خرید کے رکھ لیتی ہیں۔بازار بھی ان دکانداروں سے بھرے پڑے ہیں جو تہوار کے منظر کو مکمل کرنے کے لیے کانچ کی رنگین چوڑیاں، رنگ برنگی چوڑیاں اور دیگر لوازمات پیش کرتے ہیں۔
جیسے جیسے رات بڑھتی ہے، خاندان ایک خاص کھانے کے لیے اکٹھے ہوتے ہیں جسے ‘چاند رات ڈنر’ کہا جاتا ہے۔ یہ اپنے پیاروں کے لیے مزیدار روایتی پکوان بنانے اور ان سے لطف اندوز ہونے، تحائف کا تبادلہ کرنے اور کہانیاں اور ہنسی بانٹنے کا وقت ہوتا ہے۔ یہ تعلقات کو مضبوط بنانے اور گزشتہ مہینے کی برکات کے لیے شکرگزار ہونے کا وقت ہوتا ہے۔
خواتین تو چاند رات کو ہی ہجاب میں مارکیٹ جاتی ہیں۔اور مہندی لگاتی ہے۔اب تو مارکیٹ میں جاکر مہندی لگانے کا فیشن پروان چڑھنے لگا ہے۔
لیکن چاند رات کی اصل خاص بات وہ لمحہ ہے جب عید کا نیا چاند نظر آتا ہے۔گلیاں اور گھر آتشبازی اور چمکوں سے جگمگا اٹھتے ہیں، اور لوگ رمضان کے اختتام اور عید کے آغاز کے موقع پر دعائیں اور شکریہ ادا کرتے ہیں۔خاص طور پر بچے جوش و خروش سے بھر جاتے ہیں کیونکہ وہ اپنے بزرگوں سے محبت اور برکت کی علامت کے طور پر تحائف اور رقم وصول کرتے ہیں۔جو کہ عیدی کہلاتی ہے۔
چاند رات نہ صرف رمضان کے اختتام کا جشن ہے بلکہ یہ اسلامی عقیدے میں اتحاد، محبت اور سخاوت کی اہمیت کو بھی اجاگر کرتا ہے۔ یہ وقت ہے کہ ہم ایک کمیونٹی کے طور پر اکٹھے ہوں اور ثقافت یا پس منظر میں فرق سے قطع نظر اپنے آس پاس کے لوگوں کے لیے خوشی اور مسرت پھیلائیں۔
حالیہ برسوں میں، چاند رات بہت سے غیر مسلم ممالک میں بھی ایک مقبول تقریب بن گئی ہے، جہاں مسلم کمیونٹیز چاند رات منانے اور اپنی ثقافت کو دوسروں کے ساتھ بانٹنے کے لیے اکٹھے ہوتے ہیں۔اس سے مختلف برادریوں کے درمیان افہام و تفہیم اور رواداری کو فروغ دینے میں مدد ملی ہے، جس سے چاند رات نہ صرف ایک مذہبی جشن ہے، بلکہ ہم آہنگی اور تنوع کی علامت بھی ہے۔
آخر میں، چاند رات ایک ایسی رات ہے جو پوری دنیا کے مسلمانوں کے لیے بہت اہمیت رکھتی ہے۔ یہ روحانی عقیدت اور خود عکاسی کے مہینے کے اختتام کو منانے اور عید الفطر کی خوشیوں اور برکتوں کا استقبال کرنے کا وقت ہوتا ہے۔لیکن تہواروں سے ہٹ کر، یہ محبت، اتحاد اور سخاوت کی ان اقدار کی یاد دہانی ہے جو اسلامی عقیدے کا مرکز ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں